April 22, 2024

Warning: sprintf(): Too few arguments in /www/wwwroot/phillybizmedia.com/wp-content/themes/chromenews/lib/breadcrumb-trail/inc/breadcrumbs.php on line 253

ایٹمی اسلحہ کے پھیلاؤ کی روک تھام سے متعلق سلامتی کونسل کے اجلاس میں یواین سیکریٹری جنرل نے کہا کہ ایک غلطی بڑی تباہی کا باعث بن سکتی ہے۔

United Nations Secretary General Antonio Guterres. Photo: INN

اقوام متحدہ کے سیکریٹری جنرل انتونیو غطریس۔ تصویر : آئی این این

رو س کے ذریعے تیسری عالمی جنگ اورمغربی طاقتوں کے خلاف جوہری ہتھیاروں کے استعمال کی دھمکی پر اقوام متحدہ کے سیکریٹری جنرل انتونیو غطریس نے کہا ہے اس طرح کی دھمکیاں کسی قیمت قابل قبول نہیں ہے۔ انتونیو غطریس نے کہا کہ دنیا پر آج نیوکلیائی جنگ کا خطرہ منڈلا رہا ہے۔ جاپان کے شہروں ہیروشیما اور ناگاساکی میں تباہی کے تقریباً۸۰؍ سال بعد بھی جوہری ہتھیار عالمی امن اور سلامتی کیلئے سنگین خطرہ بنے ہوئے ہیں۔ انہوں نے جوہری ہتھیاروں کی تخفیف اور ان کے پھیلاؤ کی روک تھام سے متعلق جاپان کی درخواست پرطلب کئےگئے سلامتی کونسل کے اجلاس کے دوران جوہری طاقتوں پر زور دیا کہ وہ ۶؍شعبوں میں کارروائی کیلئے رہنمائی کریں جس میں بات چیت اور جوابدہی شامل ہے۔ 
 اقوام متحدہ کے سیکریٹری جنرل نے خبر دار کیا کہ’’ جوہری ہتھیار اب تک ایجاد کیے گئے سب سے تباہ کن ہتھیار ہیں جو زمین پر موجود تمام زندگیوں کو ختم کرنے کی صلاحیت رکھتے ہیں۔ ایک حادثاتی لانچ، ایک غلطی، ایک غلط تعین اور جلد بازی سے کیا گیا کام بڑی تباہی کا باعث بن سکتا ہے۔ ‘‘
 انہوں نے کہا کہ جاپان وہ واحد ملک ہے جو جوہری ہتھیاروں سے حملے کی جارحانہ قیمت کسی بھی دوسرے ملک سے زیادہ بہتر طوپر جانتا ہے، سلامتی کونسل کا اجلاس ایسے وقت میں منعقد کیا گیا ہے جب جیو پولیٹکل تناؤ اور عدم اعتماد سے جوہری جنگ کا خطرہ انتہا پر پہنچ چکا ہے۔ انہوں نے آسکر ایوارڈ جیتنے والی ہالی ووڈ فلم’ اوپن ہائیمر’ کی مثال دیتے ہوئے کہا کہ اس میں خوفناک جوہری تباہی کی تلخ حقیقت کو دنیا کے سامنے لایا گیاکہ اس طرح کوئی حملہ کیا گیا تو نسل انسانی کا بقا ممکن نہیں ہوگا۔ ان کا کہنا تھا کہ اپیلوں کے باوجود جوہری طاقتیں مذاکرات کی میز پر نہیں آرہیں، انہوں نے کہا کہ جنگی ساز وسامان میں سرمایہ کاری، امن کی کوششوں میں سرمایہ کاری کو پیچھے چھوڑ رہی ہے۔ انتونیو غطریس نے زور دیا کہ جوہری اسلحہ کا عدم توسیع ہی خودکشی کے سائے کو ہمیشہ کیلئے ختم کرنے کا واحد راستہ ہے۔ انہوں نے اس معاملے میں عالمی طاقتوں بالخصوص امریکہ اورروس سے گفتگو کا راستہ اختیار کرنے کی اپیل کی۔ 

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *